آئین پاکستان میں ترامیم کرکے مکمل اختیارات کے ساتھ صوبائی سٹیٹس دیا جائے۔ قومی اسمبلی ،سینٹ اور دیگر تمام اداروں میں گلگت بلتستان کے عوام کو نمائندگی دی جائے

گلگت (ایم ڈبلیو ایم میڈیا سیل) آئین پاکستان میں ترامیم کرکے مکمل اختیارات کے ساتھ صوبائی سٹیٹس دیا جائے۔ قومی اسمبلی ،سینٹ اور دیگر تمام اداروں میں گلگت بلتستان کے عوام کو نمائندگی دی جائے۔اگر ایسا ممکن نہ ہو تو پھر مقبوضہ کشمیر طرز کا سیٹ اپ جو انڈیا نے اپنے آئین کے آرٹیکل 370 کے مطابق مقبوضہ کشمیر کے عوام کو دیا ہے وہی سیٹ اپ گلگت بلتستان کو دیا جائے۔
پاکستان مسلم لیگ کی جانب سے بلائی گئی آل پارٹیز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے سیکرٹری جنرل مجلس وحدت مسلمین شیخ نیئر عباس مصطفوی نے کہا کہ موجودہ حکومت کی جانب سے 68 سالوں سے محروم گلگت بلتستان کے عوام کو آئینی حقوق کی فراہمی کے سلسلے میں اٹھایا جانیوالا اقدام خوش آئند ہے ۔انہوں نے کہا کہ اس خطے کے وفا شعار عوام نے بڑی امیدوں اور امنگوں کے ساتھ پاکستان کے ساتھ الحاق کیا لیکن بدقسمتی سے مسند اقتدار پر بیٹھنے والے حکمران تو بدلتے رہے لیکن گلگت بلتستان کے عوام کی تقدیر نہیں بدلی اور انہی حکمرانوں نے اپنی نااہلی یا بد نیتی کی بناء پر اس آزاد ریاست کے حدود کو بھی محدود کردیاگیا اور 68 سالوں تک اس خطے کے عوام پر وفاقی حکومتوں کا جبر مسلط رہا اور وقتا فوقتا مختلف پیکجز اور ایس آر اوز کے ذریعے عوامی امنگوں کو پائمال کیا جاتا رہا ،علاقے کے عوام کوبنیادی انسانی حقوق سے محروم رکھ کر اس خطے کے عوام کے ساتھ انتہائی مضحکہ خیز رویوں کو اپنایا گیا۔
انہوں نے اس حقیقت کا بھی برملا اظہار کیاکہ جب بھی علاقے کے عوام نے باہم متحد ویک زبان ہوکر حقوق کا مطالبہ کیا تو لڑاؤ اور حکومت کرو کی پالیسی کو اپنایا گیا اور بھائی کو بھائی سے لڑوانے کا سلسلہ بھی یوں ہی چلا آرہا ہے۔لسانی ،مذہبی اور علاقائی عصبیت کو ہوا دی گئی عوام کو ایک دوسرے دور کردیا ہے تاکہ نہ رہے بانس اور نہ بجے بانسری۔پاکستان سے ہماری وفاداری کو مشکوک بنادیا گیا حالانکہ دغابازیوں کے باوجود اس خطے میں آج تک علٰحیدگی کی کسی تحریک نے جنم نہیں لیا ہے اور پاکستان کے ساتھ اس ارض گلگت بلتستان کے باسیوں سے زیادہ وفادار بھی کوئی نہیں۔اس خطے کے ہزاروں باوفا جوانوں (این ایل آئی ) نے ملک عزیز کے سرحدوں کی حفاظت میں اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کیا ہے اور لالک جان شہید ان چند شہداء میں شامل ہیں جنہوں نے وطن عزیز پاکستان کے تحفظ کی خاطر اپنی جان کا نذرانہ پیش کیا اورسب سے بڑا قومی اعزاز ” نشان حیدر” کا مستحق ٹھہرا۔حقوق سے محروم اس غیور ملت کو یہ بھی اعزاز حاصل ہے کہ آج ملک عزیز سے دہشت گردی کا قلع قمع کرنے کیلئے این ایل آئی کے جوان ہراول دستے کا کردار ادا کررہے ہیں۔
انہوں نے گلگت بلتستان کی تاریخ اور موجودہ حالات کے تناظر میں مجلس وحدت مسلمین پاکستان گلگت بلتستان کی جانب سے یہ مطالبہ کیا کہ ” گلگت بلتستان کے حدود کو متاثر کئے بغیر آئین پاکستان میں ضروری ترامیم کے ساتھ پاکستان کے دیگر صوبوں کی مانند ایک مکمل آئینی صوبائی حیثیت کا تعین کیا جائے جس میں صوبہ گلگت بلتستان کو وہی اختیارات حاصل ہوں جو پنجاب،خیبر پختونخواہ،سندھ اور بلوچستان کو حاصل ہیں”۔
۲۔ صوبہ گلگت بلتستان کے جغرافیائی حدود میں کسی قسم کی کمی یا زیادتی نہ ہو
۳۔ صوبائی حیثیت عارضی نہ ہو۔
۴۔ قومی اسمبلی اور سینٹ میں نمائندگی ہو۔
اور اگر اس قسم کا خود مختار آئینی صوبے کا قیام ممکن نہ ہو تو پھر عبوری طور پر مقبوضہ کشمیر طرز کا سیٹ اپ دیا جائے جو ہندوستان نے مقبوضہ کشمیر کے عوام کو آئین ہندوستان کے آرٹیکل 370 کی روشنی میں دیا ہے

About Ali Haider

ایک تبصرہ

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.